May 19, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/station57.net/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
الكاهن المطعون في أستراليا

آسٹریلیا میں حکام نے بتایا ہے کہ پیر کو مغربی سڈنی میں چرچ کی خدمت کے دوران چاقو سے وار کیے جانے کے بعد چار افراد معمولی زخمی ہوئے ہیں۔

یہ واقعہ مشرقی سڈنی کے ایک مال میں چاقو سے حملے کے صرف دو دن بعد پیش آیا ہے جس میں 6 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

لائیو فوٹیج میں دکھائے گئے حملے میں شہر کے مغرب میں ایک آشوری چرچ میں ایک اجتماع کے دوران پادری کو چاقو گھونپنے کا خوفناک منظر دکھایا گیا ہے۔

ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ ملزم نے اپنا دایاں بازو اٹھایا اور پادری کو چاقو سے وار کیا، جس سے عبادت گذاروں میں خوف و ہراس پھیل گیا اور انہوں نے چیخنا شروع کر دیا۔

اس دوران بہت سے لوگ مدد کے لیے دوڑ پڑے۔

ایمبولینس سروس نے اے ایف پی کو بتایا کہ 20 سے 70 سال کی عمر کے چار افراد کے زخمی ہونے کے بعد ان کا علاج کیا جا رہا ہے۔

مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ یہ واقعہ چرچ آف دی گڈ شیفرڈ میں پیش آیا۔

ابھی تک حملے کی تفصیلات کی تصدیق نہیں ہوسکی ہے لیکن مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ حملہ آور کو گرفتار کرلیا گیا ہے، جب کہ لوگوں کا بڑا ہجوم وقوعہ پر موجود تھا۔

چاقو کے حملے کو چرچ کے فیس بک اکاؤنٹ پر براہ راست نشر کیا گیا تھا، جہاں فوٹیج میں دکھایا گیا تھا کہ فادر میری ایمینوئل کو آشوری بائبل پر خطبہ دیتے ہوئے چہرے پر چاقو سے حملہ کیا گیا۔

چار زخمیوں میں ایک شخص پچاس سال کی عمر کا ہے، دوسرا تیس سال کا۔ یک کی عمر بیس سال اور ایک ساٹھ سال کی عمر کا بتایا جاتا ہے۔

آسٹریلوی پولیس نے واقعے کے بعد ایک شخص کی گرفتاری کا اعلان کیا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *